ہم اسلام لائے ‫!

ذرا غور کیجئے ۔۔۔
آج ہندوستان اور پاکستان میں ہی نہیں ساری دنیا میں ایک طرف مسلمان اخلاقی ، سیاسی اور معاشی طور پر ذلیل سے ذلیل تر ہوتا جا رہا ہے تو دوسری طرف مکہ اور مدینہ کو دوڑ دوڑ کر آنے والوں کی تعداد میں ہر سال لاکھوں کا اضافہ ہو رہا ہے ۔
حرم شریف میں شبِ قدر کی دُعا میں شریک ہو نے کے لئے لاکھوں روپیہ خرچ کر کے آنے والوں کی تعداد بھی لاکھوں تک پہنچ چکی ہے۔ پھر بھی نہ کوئی دعا قبول ہوتی ہے نہ کسی مسلمان کے اخلاق یا کردار میں تبدیلی آتی ہے۔
آخر ایسا کیوں ہے ؟

ایسا اس لئے ہے کہ آج ہمارا ہر عمل وہ ہے جو ہمارے نفس کو مرغوب ہے ۔ ایسا کوئی حکم جو اللہ اور اللہ کے رسول (صلی اللہ علیہ وسلم) نے دیا ہو لیکن اگر وہ۔۔۔
ہمارے موڈ کے خلاف ہو ،
مزاج اور اصول سے میل نہ کھا تا ہو
یا اُسے ہماری عقل اور منطق (Rationale & logic) تسلیم نہ کرتی ہو،
تو ہم اُس پر ہر گز عمل نہیں کرتے !
نہ صرف اُسے ٹال دیتے ہیں بلکہ ضمیر کی تسلی کیلئے کوئی نہ کوئی جواز بھی پیدا کر لیتے ہیں ۔بلکہ فتوے بھی ساتھ لئے پھرتے ہیں۔

پوچھئے کسی بے پردہ خاتون سے ، کہے گی پردہ آنکھوں میں اور دل میں ہونا چاہئے۔
پوچھئے کسی بھی سمجھدار مسلمان سے دعوت و تبلیغ کی فرضیت کے بارے میں تو کہے گا پہلے آدمی کو خود باعمل ہونا چاہئے اُسکے بعد دوسروں کو دعوت دینی چاہئے۔
پوچھئے کسی بھی جہیز کے عوض بِکنے والے بھکاری بے غیرت مرد سے ، کہے گا ہم نے ہرگز نہیں مانگا لڑکی والوں نے سب کچھ اپنی خوشی سے دیا۔
پوچھئے سود اور رشوت کے نظام کا ساتھ دینے والوں سے ۔کہیں گے یہ تو سسٹم ہے ۔
پوچھئے جھوٹ، غیبت، چغلی،بدگمانی،حسد اور فریب کرنے والوں سے، کہیں گے دلوں کا حال تو اللہ جانتا ہے۔ ہم بُری نیّت سے کوئی کام نہیں کرتے۔
پوچھئے قطع رحمی یعنی رشتے داریاں کاٹنے والوں سے ، کہیں گے اگر دوسرے ہمارے ساتھ اچھا سلوک کرتے تو ہم بھی ان کے ساتھ اچھا سلوک کرتے۔

ہر شخص یو ں تو نمازی اور با عمل ہے لیکن ہر ایک نے اپنی پسند کی عبادت کو پکڑ رکھا ہے ۔ کسی کو داڑھی پسند ہے تو کسی کو نماز ۔کسی کو نفل عمرے یا حج کرنا تو کسی کو خدمت خلق کا ادارہ کھولنا پسند ہے ۔لیکن جب وہ مرحلہ آتا ہے جس کا حکم سب سے پہلے انکی ذات پر نافذ ہوتا ہے تو منہ موڑ جاتے ہیں اور وہی بہانے بناتے ہیں جن کا ہم نے اوپر ذکر کیا ہے۔اسی فطرت کی عکاسی سورہ الحجرات (آیت:14) میں یوں کی گئی ہے :
قَالَتِ الأَعْرَابُ آمَنَّا قُل لَّمْ تُؤْمِنُوا وَلَكِن قُولُوا أَسْلَمْنَا وَلَمَّا يَدْخُلِ الإِيمَانُ فِي قُلُوبِكُمْ
ترجمہ : یہ بدّو کہتے ہیں ہم ایمان لائے ۔ان سے کہہ دیجئے تم ایمان نہیں لائے تم یہ کہو کہ اسلام لائے ہو۔ایمان تو تمہارے دلو ں میں ابھی داخل بھی نہیں ہوا۔

اسلام لائے ۔۔۔ یعنی دوسرے لوگ جو کام کر رہے ہیں تم بھی کر رہے ہو !
دوسرے نماز پڑھتے ہیں تم بھی پڑھتے ہو دوسرے روزہ ، زکٰوة ، ختنہ، نکاح اور تدفین وغیرہ کے اسلامی اصولوں پر چلتے ہیں، تم بھی چلتے ہوتاکہ مسلمان سوسائٹی میں تمہیں بھی شمار کیا جائے۔ لیکن ایمان لانا الگ چیز ہے جو ابھی تمہارے دلوں میں داخل بھی نہیں ہوا، صرف زبانوں پر ہے ۔اسی لئے جب اصل امتحان کا وقت آتا ہے تو تم دوسری عبادتوں کو پیش کر کے اپنے ضمیر کی تسلی کرنا چاہتے ہو جو دراصل اللہ تعالٰیٰ کو چکمہ دینا ہے ۔ ایک کمانے والے سے حلال کمائی کا سوال پہلے ہوگا بعد میں نمازوں کا ۔ ایک دولہے یا دولہے کے ماں باپ سے جوڑا جہیز اور غیر اسلامی رسومات کا سوال پہلے ہوگا ، روزوں اور زکوٰة کا بعد میں ۔
اسی طرح ایک استطاعت رکھنے والے سے نفل عمروں اور نفل حج کا سوال بعد میں ہوگا پہلے انفاق کا ۔

لوگ اِس حدیث کو تو یاد رکھتے ہیں کہ ایک حج سے دوسرے حج کے درمیان اور ایک عمرے سے دوسرے عمرے کے درمیان تمام صغیرہ گناہوں کو معاف کردیا جائے گا لیکن اُس حدیث کو بھول جاتے ہیں کہ
پانچ چیزوں کا جواب دئے بغیر قیامت کے دن کوئی ایک قدم بھی آگے نہ بڑھا سکے گا (چاہے اُسکے ساتھ دوسری عبادتوں کے پہاڑ ہی کیوں نہ ہوں ) :
1: وقت
2: جوانی کی صلاحیتیں
3: مال آیا کہاں سے؟
4: مال خرچ کہاں اور کس طرح ہوا؟
5: علم (حاصل کرنے اور پھیلانے کی کتنی جستجو کی)۔

Leave a Reply